مشركوں كي عيدوں اور تہواروں ميں شركت اورانہيں مباركباد دينا ()

محمد صالح المنجد

 

كيا نصارى كےتہوار (كرسمس وغيرہ) كا جشن منانا اورانہيں اس كي مباركباد دينا جائز ہے؟

    |

    مشركوں كي عيدوں اور تہواروں ميں شركت اورانہيں مباركباد دينا

    حضور أعياد المشركين وتهنئتهم بها

    [ اردو- أردو - urdu ]

    شیخ محمد صالح المنجد

    ترجمہ: اسلام سوال وجواب ویب سائٹ

    تنسیق: اسلام ہا ؤس ویب سائٹ

    ترجمة: موقع الإسلام سؤال وجواب
    تنسيق: موقع islamhouse

    2012 - 1434

    مشركوں كي عيدوں اور تہواروں ميں شركت اورانہيں مباركباد دينا

    كيا نصارى كےتہوار (كرسمس وغيرہ) كا جشن منانا اورانہيں اس كي مباركباد دينا جائز ہے؟

    الحمد للہ

    ابن قيم رحمہ اللہ تعالي كہتےہيں: اہل علم كا اتفاق ہے كہ مسلمانوں كےليے مشركوں كي عيدوں ميں شركت كرنا جائزنہيں ہے، اور مذاہب اربعہ كےفقہاء نےبھي اپني كتب ميں اس كي صراحت كي ہے....

    اور امام بيھقي نےصحيح سند كےساتھ عمر بن خطاب رضي اللہ تعالي عنہ سے روايت كيا ہے كہ عمررضي اللہ تعالي عنہ نےكہا: (مشركوں كي عيد كےدن ان كےگرجا گھروں ميں مشركوں كےپاس نہ جاؤ كيونكہ ان پر ناراضگي نازل ہوتي ہے)

    اور عمر رضي اللہ تعالي عنہ كا يہ بھي قول ہےكہ: (اللہ كےدشمنوں سےان كي عيدوں ميں اجتناب كيا كرو)

    اور امام بيھقي رحمہ اللہ تعالي نے عبداللہ بن عمرو رضي اللہ تعالي عنہ سے جيد سند كےساتھ روايت كيا ہے كہ انہوں نےكہا: (جو كوئي بھي عجميوں كےملك سےگزرا اور اس نےان كي نيروز اور مہرجان كےجشن منائے اورموت تك ان سےمشابہت اختيار كي تو وہ روز قيامت بھي ان كےساتھ اٹھايا جائےگا) اھ

    ديكھيں: احكام اھل الذمة ( 1 / 723-724 ) .

    اور رہا مسئلہ انہيں ان كي عيدوں كي مباركباد دينےكا تواس كے متعلق جواب سوال نمبر ( 947 ) ميں گزر چكا ہے، ہم سائل سےگزارش كرتے ہيں كہ وہ اس سوال كا مطالعہ كرے.

    واللہ اعلم .